یاد وطن

بجھا جو روزنِ زنداں تو دل یہ سمجھا ہے
تیری مانگ ستاروں سے بھر گئی ہو گی

وطن سے نکلے کچھ ڈیڑھ مہینہ ہی ہوا ہے اور لگتا ہے شاید اب لوڈ شیڈنگ کچھ کم ہو گئی گی۔۔۔بائیس گھنٹوں کی لوڈ شیڈنگ یہ آنکھیں دیکھ آئی ہیں تب تو مئی کا آغاز تھا اور گرمی قابل برداشت تھی اب جون کی گرمی ، لوڈ شیڈنگ کی بھرمار، لو اور میر  انیس کے مرثیوں کا سا سماں۔۔۔۔کہ بھن جاتا تھا جو گرتا تھا دانہ زمین پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جانے احباب کس حال میں ہوں گے۔۔۔خدا تعالی ہمارے ملک پر رحم فرمائیں۔۔