جاوید ہاشمی -سالگرہ مبارک

جاوید ہاشمی -سالگرہ مبارک
نو جوانوں کی سی امنگ ترنگ رکھنے والا جاوید ہاشمی  آج تحریک کے کاروان کا حصہ ہےِ، اور سمجھتا ھے کہ یہی چراغ جلیں گے تو روشنی ہو گی۔
،محترم عرفان صدیقی صاحب http://e.jang.com.pk/pic.asp?npic=12-30-2011/Pindi/images/06_03.gif نے دو چار دن کی قلمی مشقت کے بعد یہ نتیجہ اخز کیا ہے کہ ـ۔ایک بات طے ہے کہ ہاشمی کو کارکنوں کی وہ بے لاگ محبتں نہ مل پائں گی جنہیں وہ روتا بلکتا چھوڑ آیا ہے۔ ۔۔۔۔۔انہی کے توسط سے یہ بھی پتہ چلا کے ھاشمی کے جیل جانے کے عرصے میں ان کا، ان کے مہمانوں کا اور جیل والوں کا کھانا ۔۔۔۔جو کسی دعوت سے کم نہ ہوتا تھا میاں صاحب کے گھر سے جاتا تھا۔۔وغیرہ وغیرہ۔۔۔۔۔۔۔۔پرواز میں کوتاہی اور اتنی  دیر تک ن لیگ کو جھیلنے کی وجہ اب کچھ کچھ سمجھ میں آتی ہے۔
دوستو !!!!
ایک بات کو میں بھی حتمی سمجھتا ہوں کہ
آئینِ نو سے ڈرنا، طرزِ کھہن پہ اڑنا
منزل کٹھن یہی ہے ، قوموں کی زندگی میں

انسان کی زندگی کے مشکل فیصلو ں میں سے بڑا اور مشکل فیصلہ اپنی سابقہ روش میں اصلاح کا ہوا کرتا ہے۔ آزادی کی خواہش کے باوجود جمود انسان کو جکڑے رکھتا ہے۔ اور جب خواہش عمل کا جامہ زیبِ تن کرتی ھے تو ایک جھٹکے سے آدمی جمود کی قید سے آزاد ہوتا چلا جاتا ھے، اور اپنے گرد جمی ہوئی کائی اور دھول سے نجات پا لیتا ھے۔ گو کہ اپنے من میں ڈوبنے اور اپنے پیکر کو پا لینے میں وقت تو لگتا ھے مگر آدمی کے ہاتھ اپنی اصل تصویر لگ جاے تو پھر تاویلں اور
دلیلں اپنے معنی کھو دیتی ھہں اور آدمی کو صاحب حال کر دیتی ھیں۔
جاوید ہاشمی نے طرزِ کہن کو خیر باد کہا ھے کہ وہ باخبر ہے کہ ظن و تخمیں سے ہاتھ آتا نیہیں آ ہوِ تاتاری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس تعلق کی سب سے خوبصورت بات یہ ھے کہ وہ پاکستان  کے لئے میدان میں ا یا ھے۔ ۔۔۔۔ویسے تو یہی وہ فقرہ ھے جس کی حرمت کو سب سے زیادہ پا ما ل کیا گیا ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پا کستان کے وسیع تر مفاد میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن خدا کرے کے سچے آدمی کو سچ نبھانے کی توفیق ملے۔۔۔۔۔۔
اکتیس دسمبر کو جاوید ھاشمی چونسٹھ و یں سال میں داخل ہو جا ئیں گے۔ یہ ان کا تحریکِ انصاف میں شامل ہونے کے بعد پہلا جنم دن ہو گا۔۔۔۔۔۔میں سبھی دوستوں سے، تحریک کے کا ر کنوں سے التماس کرتا ہوں کہ جاوید ھاشمی کو محبتوں اور مسکراہٹوں کا تحفہ ضرور پیش کریں تاکہ ہم یہ رقم کر سکیں کہ سچ اور سچے کو چاہنے والے کبھی کم نہیں ھوتے۔
جاوید ھاشمی صاحب۔۔۔۔۔۔ھمیں آپ سے محبت ھے، خدارا اس کرپٹ نظام کے خاتمے کے لئے آگے بڑھیں اور پرانی رفاقتوں کو قومی مفاد کے راستے میں حائل نہ ہونے دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کرے کے نیا سال آپ کے لئے کامرانیاں لے کر آے۔