کرہ ارض کے بجھے چلے جاتے ہیں چراغ

بستیاں چاند ستاروں پہ بسانے والو
کرہ ارض کے بجھے جاتے ہیں چراغ۔
جی ہاں جناب صدر۔ہماری آنکھیں دور کی سہانی پہاڑیوں کے خوابوں سے ہری بھری ہیں، اورہمارے کان  دور کے ڈھولوں کی تھاپ پر شاداں و فرحاں،ہمارے منصوبے سات سمندر پار زمینوں کی زرخیزی سے اٹے ہوئے۔ ہمارے تصورات میں نئے جہاں آباد ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ہم دوش ثریا ہونے کی خواہشوں میں ہماری زمین بنجر ہونے لگی کہ آج تو حال یہ ہے کہ

بھوک چہروں پہ لئے چاند سے پیارے بچے
بیچنتے پھتے ہیں گلیوں میں غبارے بچے
ان فضاوں میں تو بارود کی بو آتی ہے
ان فضاوں میں تو مر جائیں گے سارے بچے

عالی وقار

حضرت انسان کے عروج کے چرچے آسمانوں پر ہیں، وہ کیا ہے جو ہم نے حاصل نہیں کرلیا، پرندوں کی مانند ہوا کا سینہ چیرتے ہوائی جہاز، سمندروں کی چھاتی پر ہچکولے بھرنے والی بحری جہاز، پردیس کی باتوں کو کان کے پردوں پر انڈیلنے والے موبائل فون، جھرنوں کی آوازوں کے اثرات پیدا کرتے ہوئے موسیقی کے آلات، جام جمشید کی مانند ہر لمحہ خبر دینے والے ٹیلی ویزن، گھنٹوں کا سفر منٹوں میں طے کرنے والی گاڑیاں، موسموں کی شدت کو کم کرنے والے لباس، غرضیکہ وہ کیا نہیں جو اس ابن آدم کے تخیل میں تھا اور اس نہ حاصل نہ کر لیا ہو۔۔۔۔مگر دور دیس کے خوابوں میں اپنے جہان کے مسائل کو فراموش کرتا چلا گیا، ستارہ سحری کی خبر رکھنے والا اپنے ہمسائے کے حال سے بے خبر ہوتا چلا گیا، اس کی مسکراہٹیں محدود ہوتی چلی گئی ،



اب عالم یہ ہے امن کے گھروں میں بے امنی نے بسیرا کر لیا، جو جگہیں جائے امان سمجھی جاتیں تھیں ان کو مقتل بنایا جا رہا ہے، گندم اور سرسوں کے سٹے اور پھول مہکتے تو ہیں مگر ان پر استعمال ہونے والے زہروں کو اثر ہماری نسل کو بانجھ بنائے جا رہا ہے، دودھ دینے والوں نے جب سے انجکشنوں کے دم سے جانوروں سے دودھ وصولی شروع کی ہے اسی دودھ سے بیماریاں جنم لے رہی ہیں،
جباب والا
جب ویکسین ہی زہر بن جائے، جب درد کی دواوں سے درد بڑھتا ہو، جب دودھ کی بوتلوں میں بیماریاں بٹتی ہوں، جب ترقی کی روشنی سے اپنے ہی بچوں کے مستقبل کے چندھیا جانے کا اندیشہ ہو، جب ہر تازہ سبزی پیسٹی سائیڈ سے دھلی ہو، جب ہر نیا پھول کسی ہارمون کی وجہ سے کھلا ہو، جب فراوانی رزق تو ہو مگر خوراک جزوبدن نہ بنتی ہو، وٹامن کی بوتلیں لوگوں کے چہروں پر نظر کی عینکیں سجاتی ہوں، ڈالڈا کی بے برکتی سے ہڈیوں میں جان بھی نہ پڑتی ہو، جب ہر چکنائی کولسٹرول بڑھاتی ہو اور ہر مٹھاس سے شوگر ہو جانے کا اندیشہ ہو تو انسان کو ایک لمحے کے ٹھہر کر سوچنا ہو ، کہ چاند کی چاہ میں وہ اپنے گھر کے چراغوں کا قاتل بنتا جا رہا ہے۔
اسے پھر سے وہ بستیاں بسانی ہیں جہاں پودوں کا ہرا رنگ کسی پینٹ کا نہیں قدرت کے کلوروفل کا مرہون منت ہے۔ اسے پھر سے اپنے جانوروں کو ایسی خوراک دینی ہے کہ وہ شفا بخشنے والے نور سے سرفراز کریں۔ اور پھر سے زمینوں کو ایسی غذائیت دینی ہیں جو انسان کے لئے متوازن خوراک کا بندوبست کر سکے۔